in

شہباز شریف کا پانچ ممالک کے سربراہان کے گھٹنوں کو ہاتھ لگانے کا انکشاف لیکن ساتھ ہی کیا درخواست کی؟ تہلکہ خیز انکشاف

شہباز شریف کا پانچ ممالک کے سربراہان کے گھٹنوں کو ہاتھ لگانے کا انکشاف لیکن ساتھ ہی کیا درخواست کی؟ تہلکہ خیز انکشاف

شہباز شریف کا پانچ ممالک کے سربراہان کے گھٹنوں کو ہاتھ لگانے کا انکشاف لیکن …

لاہور ( ڈیلی پاکستان آن لائن ) مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف نے کہا کہ ہم نے ملک سے لوڈ شیڈنگ کی لعنت کو ختم کر دیا تھا ، ملک سے لوڈ شیڈنگ کے خاتمے کیلئے پانچ ممالک کے سربراہان کے گھٹنوں کو ہاتھ لگا کر درخواست بھی کی ۔

شہباز شریف نے لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ جب ملک میں لوڈ شیڈنگ کا جن بے قابو تھا تو پانچ ممالک کے سربراہان کے گھٹنوں کو ہاتھ لگا کر پاکستان میں پاور پلانٹ لگانے کی درخواست کی ، ان ممالک نے رضا مندی کا اظہار بھی کیا تھا مگر بعد ازاں وہاں کے کچھ معاملات کی وجہ سے یہ پراجیکٹ تاخیر کا شکار ہو گیا جس کے باعث نواز شریف صاحب سے درخواست کی کہ ملک میں جاری دیگر پراجیکٹس پر کٹ لگا کر ہمیں سب سے پہلے پاور پلانٹ لگانے چاہئیں ، اگر لوڈ شیڈنگ ختم نہ کی تو عوام ہمیں معاف نہیں کریں گے ۔

شہباز شریف نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان نے معیشت کو تباہ کر دیا،لاکھوں لوگ بیروزگار ہو چکے ہیں ، موجودہ حکومت کے تین سال میں لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ دوبارہ شروع ہو چکا ہے ،تین سالوں میں قوم کو بے دردی سے لوٹا گیا ، ہم پر الزام عائد کیا گیا کہ کمیشن کھانے کیلئے ن لیگ نے اضافی بجلی پیدا کی ،بجلی فاتو تھی تو مزید پلانٹ کیوں لگائے ، بجلی اضافی تھی تو لوڈ شیڈنگ کیوں ہوئی ، پاور پراجیکٹس میں دھیلے کی کرپشن ثابت نہیں ہوئی ۔

شہباز شریف نے کہا کہ نیب نیازی گٹھ جوڑ نے پاور پلانٹ میں کرپشن دکھانے کی کوشش کی ، تریموں میں لگایا جانے والا پلانٹ آج تک شروع نہیں ہو سکا، تریموں پاور پلانٹ میں اب تک 35ارب روپے کا نقصان ہو چکا، گیس بحران اس لئے ہوا کہ یہ چہیتوں کو گیس دے رہے تھے ، کہتے ہیں بجلی اضافی ہے لیکن ٹرانسمیشن کیلئے لائنز نہیں ، اربوں روپے کی کیپسٹی پیمنٹ حکومت کو ، سرکار کو جا رہی ہے ، ہمارے لگائے گئے منصوبوں کی دنیا میں کوئی نظیر نہیں ملتی ۔

صدر مسلم لیگ ن نے کہا کہ عوامی خدمت کے بدلے ہمیں جھوٹے مقدمات کا سامنا کرنا پڑا، ساہیوال کا پاور پلانٹ پراجیکٹ ریکارڈ 22ماہ میں مکمل کیا ، اسی سائز اور صلاحیت کا پلانٹ چین میں 34ماہ میں لگا تھا ، ساہیوال اور پورٹ قاسم کے پلانٹ ایک ہی وقت میں شروع ہوئے ، پورٹ قاسم کا پلانٹ چھ سے سات ماہ بعد فعال ہو اتھا ۔

قائد حزب اختلاف کا کہنا تھا کہ ہم نے ساہیوال پراجیکٹ کا دو فیصد صحت اور تعلیم پر لگایا جو چالیس سے پچاس کروڑ روپے بنتے ہیں ، اگر یہ پیسے ہماری حکومت کے بعد بھی صحت اور تعلیم پر لگائے جاتے تو آپ کو کورونا کی ویکسین کیلئے کوئی دقت نہ ہوتی ۔

شہباز شریف نے کہا کہ ہم نے دو گیس کے پاور پلانٹ لگائے ، ایک پلانٹ لگانے کیلئے ایک ہزار کلو میٹر کی لائن بچھائی گئی ، ان کی حکومت کے تین سال مکمل ہو چکے ہیں ، انہوں نے اب تک کیا کام کیاہے ؟۔

مزید :

اہم خبریںسیاست



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

انتخابی اصلاحات کی دعوت پراپوزیشن نہیں آتی،شیخ رشید

انتخابی اصلاحات کی دعوت پراپوزیشن نہیں آتی،شیخ رشید

ڈالر سستا ہوگیا، آج کے کرنسی ریٹ

ڈالر سستا ہوگیا، آج کے کرنسی ریٹ