in

پاکستانی کوہ پیماؤں نےپہلی باردنیاکی10ویں بلندچوٹی سرکرلی

پاکستانی کوہ پیماؤں نےپہلی باردنیاکی10ویں بلندچوٹی سرکرلی

نیپال میں دنیا کی 10 ویں بلند ترین چوٹی کو پہلی بار پاکستانی کوہ پیماؤں نے کامیابی سے سرکرلیا۔

گلگت بلتستان کے وزیر سیاحت اور کلچرل راجہ ناصر علی خان کی جانب سے مائیکرو بلاگنگ سائٹ پر اس بات کی تصدیق کی گئی کہ پاکستانی کوہ پیماؤں پر مشتمل 4 رکنی ٹیم نے نیپال میں موجود دنیا کی 10 ویں بلند ترین چوٹی کو سر کرلیا ہے۔

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ نیپال کی 10 ویں بلند چوٹی اناپورنا کو اس سے پہلے کسی پاکستانی نے سر نہیں کیا تھا۔ چار رکنی ٹیم رواں ماہ کے آغاز میں نیپال میں دنیا کی 10 ویں بلند ترین چوٹی اناپورنا سر کرنے کی کوشش کے لیے روانہ ہوئی تھی۔

سرباز خان کی سربراہی میں اس مہم میں کوہ پیما عبدالجوشی، منیجر سعد منور اور کامران شامل تھے۔

اس موقع پر راجہ ناصر علی خان کی جانب سے گلگت بلتستان کے شہریوں کو بھی مبارک باد پیش کی گئی۔

رپورٹ کے مطابق اس چوٹی کی بلندی 8091 میٹر ہے۔ ٹیم میں شامل سرباز خان اور عبدالجوشی کا تعلق ہنزہ سے ہے۔

چار رکنی ٹیم کی جانب سے اس مہم کو شہید پاکستانی کوہ پیما اور ہائی الٹیٹیوڈ پورٹر (ایچ اے پی) محمد علی سد پارہ، مقامی پورٹرز اور نوجوان نسل سے منسوب کیا ہے۔

واضح رہے کہ نیپال میں ہی دنیا کی بلند ترین چوٹی ماؤنٹ ایوریسٹ ہے، جس کی بلندی 8 ہزار 848 میٹر ہے، جب کہ پاکستان میں 8 ہزار میٹر والی 5 چوٹیاں ہیں جن میں کے 2، گیشربرم 1 اور 2، براڈ پیک اور نانگا پربت شامل ہیں۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ ان پہاڑیوں تک پہنچنے کیلئے کوہ پیماؤں کو ڈیتھ زون سے گزرنا پڑتا ہے، جو چوٹی سر کرنے سے پہلے ہی ایک بڑا کارنامہ ہوتا ہے۔ پہاڑوں کے اس حصے میں آکسیجن کا دباؤ سانس لینے کے لیے ناکافی ہوتا ہے۔

سطح سمندر سے 8 ہزار 91 میٹر (26 ہزار 545 فٹ) بلندی پر انا پورنا 1 دنیا کی 10 ویں بلند ترین چوٹی ہے اور اس کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ یہ سب سے خطرناک پہاڑوں میں سے ایک ہے۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

محبتیں،چاہتیں کاوہ منظرجس نے ارمینارانا خان کورُلا دیا

محبتیں،چاہتیں کاوہ منظرجس نے ارمینارانا خان کورُلا دیا

سندھ حکومت کے لوگ صرف کرپشن کرنا جانتے ہیں،حلیم عادل

سندھ حکومت کے لوگ صرف کرپشن کرنا جانتے ہیں،حلیم عادل