in

این اے75ڈسکہ: دوبارہ الیکشن کیخلاف تحریک انصاف کی درخواست مسترد

این اے75ڈسکہ: دوبارہ الیکشن کیخلاف تحریک انصاف کی درخواست مسترد

سپریم کورٹ نے این اے 75 ڈسکہ میں دوبارہ اليکشن کا فیصلہ معطل کرنے کی پی ٹی آئی کی درخواست مسترد کردی۔ جسٹس عمر عطاء بندیال نے ریمارکس دیئے کہ پولنگ کے دوران قانون پر عمل نہیں ہوا، الیکشن کمیشن نے پولیس کے عدم تعاون کا غصہ نکالا۔

سپریم کورٹ میں این اے 75 ڈسکہ میں ضمنی الیکشن میں پرتشدد واقعات کے بعد دوبارہ پولنگ فیصلے کیخلاف درخواست پر سماعت ہوئی، الیکشن کمیشن کی جانب سے حلقے کا نقشہ اور تفصیلات عدالت عظمیٰ میں پیش کی گئیں۔

ای سی پی کا کہنا تھ اکہ قومی اسمبلی کے حلقے  پر ایک کروڑ 90 لاکھ کا خرچہ آتا ہے۔ جسٹس عمر عطاء بندیال نے کہا کہ نقشے کے مطابق 20 پریزایئڈنگ افسر صبح تک غائب تھے، کیا وہ ناشتہ کرنے گئے تھے کہ صبح یکایک ایک ساتھ نمودار ہوئے۔

وکیل پی ٹی آئی نے مؤقف اپنایا کہ آر او نے 14 پولنگ اسٹیشنز پر ری پولنگ کی سفارش کی لیکن الیکشن کمیشن نے ڈی ایس پی کا بہانہ کرکے پورا الیکشن متنازع قرار دے دیا۔

جسٹس عمر عطاء بندیال نے کہا کہ ڈسکہ الیکشن کو کالعدم کرنا انتظامی فیصلہ تھا کیونکہ پولنگ کے دوران قانون پر عمل نہیں ہوا، حلقے میں تصادم ہوئے پولیس دیکھتی رہی، الیکشن کمیشن نے پولیس کے عدم تعاون کا غصہ نکالا۔

پاکستان تحریک انصاف کے اُمیدوار نے کشیدگی کا ذمہ دار مریم نواز کو ٹھہرادیا۔ علی اسجد ملہی کا کہنا تھا کہ مریم نواز تناؤ کا ماحول بنادیتی ہیں، شاہد خاقان عباسی نے کہا بندوق کے زور پر ووٹ لیں گے، اِس کو ہم ختم کرنا چاہتے ہیں۔

جسٹس منیب اختر نے ریمارکس دیئے یہ سارے ایشوز الیکشن پٹیشن میں اٹھائے جاسکتے تھے۔ عدالت دوبارہ الیکشن کا حکم معطل کر بھی دے تو کچھ نہیں ہوگا۔ عدالت نے دوبارہ الیکشن کا فیصلہ معطل کرنے کی استدعا مسترد کرتے ہوئے سماعت آئندہ ہفتے تک ملتوی کردی۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

سعودی وزارت صحت نے حاجیوں کیلئے ضوابط جاری کردیئے

سعودی وزارت صحت نے حاجیوں کیلئے ضوابط جاری کردیئے

گھرپہنچ کر بالی ووڈ اداکار رتیش دیشمک کیساتھ کیا ہوا؟

گھرپہنچ کر بالی ووڈ اداکار رتیش دیشمک کیساتھ کیا ہوا؟