in

تھر میں تیندوے کو ہلاک کردیا گیا

تھر میں تیندوے کو ہلاک کردیا گیا

سندھ کے ضلع سانگھڑ میں مقامی افراد نے تیندوے کو ہلاک کردیا۔ تیندوے کو لوگوں پر حملے کے دوران ہلاک کیا گیا۔

وائلڈ لائف سندھ کے مطابق واقعہ پیر 22 فروری کو پیش آیا، جب تیندوے نے بکریوں کے ریوڑ پر حملہ کیا۔ اس دوران قریب موجود لوگوں نے تیندوے کو دیکھ کر اس پر حملہ کیا اور اسے ہلاک کردیا۔ تھر وائلڈ لائف افسر میر اعجاز کے مطابق مقامی پانچ افراد نے پتھروں اور ڈنڈوں سے حملہ کیا اور اسے مارتے رہے، یہاں تک کہ وہ ہلاک ہوگیا۔

میر اعجاز کا کہنا تھا کہ تیندوے کو مارنے کے دوران ان افراد کو زخم بھی آئے، تاہم لوگوں نے تیندوے کو ہلاک اپنے دفاع میں کیا۔

حملے کے بعد وائلد لائف حکام کی جانب سے تیندوے کی لاش سائنٹیفک اور اسٹڈی ریسرچ کیلئے کراچی لیب بھیج دی گئی ہے۔ حکام کا کہنا ہے کہ ہلاک تیندوے کے جسم اور ٹشو سے ملنے والے اجزا سے اس بات کا پتا لگایا جائے گا کہ آیا یہ تیندوا مقامی تھا یا کہیں سے ہجرت کرکے آیا تھا۔

سماء سے گفتگو میں چیف وائلڈ افسر جاوید مہر کا کہنا تھا کہ گزشتہ 10، 15 روز سے ہم علاقے میں تیندوے کے نشانات ملنے پر اسے تلاش کر رہے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ ہمیں نگرپارکر سے ایسی اطلاعات موصول ہوئی تھیں، تاہم وائلڈ لائف حکام نے جب جگہ کا دورہ کیا تو انہیں وہاں ایسا کوئی جانور نہیں مل سکا۔

جاوید مہر کا مزید کہنا تھا کہ سرنگواری سے 40 کلومیٹر دور سورنگوالی گاؤں میں بھی ہمیں 2 روز قبل تیندوے کے قدموں کے نشانات ملے تھے اور جب تک کوئی ٹیم وہاں پہنچتی یہ واقعہ رونما ہوگیا۔

مہر نے مزید بتایا کہ یہ اس علاقے کی تاریخ میں پہلی بار ہوا ہے کہ یہاں کوئی تیندوے نظر آیا ہو۔ تاہم ممکن ہے کہ یہ تیندوا کسی کے نجی فارم ہاؤس یا چڑیا گھر سے نکل کر یہاں تک آیا ہو۔

تیندوے کے ڈی این اے کو دیگر تیندوں سے ملا کر اس بات کی تصدیق کی جائے گی کہ یہ مقامی ہے یا نہیں۔

تیندوے کے آبادی میں آنے کے بعد کیا کیا جائے؟

سماء ڈیجیٹل کی جانب سے جب ماہر ماحولیات اور وائلڈ لائف ایکسپرٹ ایرک شاہ زر سے سوال کیا گیا تو انہوں نے کہا کہ سخت موسمی حالات اور جنگلات کی کمی کی وجہ سے تیندوے سمیت دیگر جنگلی جانور آبادی کا رخ کرنے لگے ہیں۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

خالی سيکيورٹی کےدعوؤں سےقوم کادفاع ناقابلِ تسخيرنہيں ہوسکتا،احسن اقبال

خالی سيکيورٹی کےدعوؤں سےقوم کادفاع ناقابلِ تسخيرنہيں ہوسکتا،احسن اقبال

دریائے ستلج پر کشتیوں کا پل

دریائے ستلج پر کشتیوں کا پل