in

زینب الرٹ ایکٹ:وفاقی حکومت اورڈپٹی اٹارنی جنرل کونوٹس جاری

Sindh-High-Court-1

سندھ ہائی کورٹ میں زینب الرٹ ایکٹ پرعمل درآمد نہ کرنے کے خلاف درخواست کے حوالے سےعدالت نے وفاقی حکومت اورڈپٹی اٹارنی جنرل کو نوٹس جاری کردیئے۔

پیرکوسندھ ہائی کورٹ میں بچوں کے اغوا اورزیادتی کےمعاملے پرزینب الرٹ ایکٹ پرعمل درآمد نہ کرنےکےخلاف درخواست کی سماعت ہوئی۔عدالت نےفریقین سے 2 مارچ تک جواب طلب کرلیا۔

درخواست گزارنےعدالت کو بتایا کہ رسپانس اینڈ ریکوری ایکٹ مارچ 2020 میں منظور ہوا۔ایکٹ کےتحت “چائلڈ پروٹیکشن ایڈوائزری بورڈ ” بھی تاحال نہیں بن سکا۔بچوں کے اغوا کے واقعات کی روک تھام کیلئے ایکٹ پر فوری عمل درآمد کا حکم دیا جاۓ۔

پچھلے برس 16 اکتوبر کو وزارت انسانی حقوق نےملک بھرمیں زینب الرٹ ایپ لانچ کی تھی اوراس کوپاکستان سٹیزن پورٹل کےساتھ بھی منسلک کردیا گیا ہے۔ وزارت انسانی حقوق نے بتایا ہے کہ ایپ کےذریعے ریپ کے واقعات کی بروقت رپورٹنگ ممکن ہوسکےگی اورالرٹ ایپ جدید ترین ٹیکنالوجی سے مزین ہے۔وزارت انسانی حقوق کا کہنا تھا کہ زینب الرٹ ایپ سے گمشدہ بچوں کی بازیابی میں مدد ملےگی۔

پچھلے برس مارچ میں آئی جی سندھ مشتاق احمد مہر نے سی سی پی او میں اسٹیٹ آف آرٹ زینب الرٹ ایپ کا افتتاح کیا تھا۔ مشتاق احمد مہر نے کہا تھا کہ یہ ایپ گم شدہ اور مل جانیوالے بچوں کی رپورٹنگ کے حوالے سے انتہائی اہمیت کی حامل ہے اوراس کےاستعمال سے زینب جیسے واقعات کی روک تھام میں پولیس کو مدد ملےگی۔ آئی جی سندھ نے مزید بتایا تھا کہ یہ عوام دوست ایپ بلامعاوضہ خدمات فراہم کرے گی۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

منال خان اوراحسن محسن اکرام نےاپناتعلق واضح کردیا

منال خان اوراحسن محسن اکرام نےاپناتعلق واضح کردیا

برطانیہ: کرونا ویکسین پاسپورٹ لانے کا مطالبہ

برطانیہ: کرونا ویکسین پاسپورٹ لانے کا مطالبہ