in

بائیکیا کے لاکھوں صارفین کا ڈیٹا لیک ہونے کا خطرہ

بائیکیا کے لاکھوں صارفین کا ڈیٹا لیک ہونے کا خطرہ

آن لائن ڈلیوری سروس بائیکیا کے ڈیٹا بیس میں بریک کے باعث بائیکیا کے لاکھوں صارفین کی حساس معلومات لیک ہونے کا خطرہ ہے۔

سیفٹی ڈیٹیکٹوز کی رپورٹ کے مطابق تقریباَ 40لاکھ صارفین کی معلومات پر مشتمل 200 جی بی ڈیٹا لیک ہونے کا خطرہ ہے۔ سائبر سیکیورٹی ٹیم نے ڈیٹا بیس کے سرور پر خطرے کی علامات دیکھی ہیں۔ سائبر ٹیم کے مطابق بائیکیا کے سرور میں کسی بھی آئی پی کے ذریعے ان کے ڈیٹا تک رسائی حاصل کی جاسکتی ہے۔

بائیکیا کی جانب سے لیک معلومات میں صارفین کے نام، لوکیشن سمیت اکاؤنٹ نمبر وغیرہ جیسی دوسری اہم معلومات شامل ہیں۔

کمپنی نے یہ بھی انکشاف کیا کہ بائیکا کو ستمبر 2020 میں بھی اسی قسم کے سائبر حملے کا سامنا کرنا پڑا تھا جس بائیکا نے کہا تھا کہ صارفین کا ڈیٹا متاثر نہیں ہوا کیونکہ انہوں نے باقاعدہ بیک اپ رکھا تھا۔

ویب سائٹ نے یہ بھی انکشاف کیا ہے کہ جن فائلوں کو لیک کیا گیا تھا ان میں صارفین اور معاہدہ کرنے والے ملازمین دونوں کے لئے ذاتی طور پر قابل شناخت معلومات موجود تھیں، اس میں ان ڈرائیورز کی بھی معلومات بھی شامل تھیں جن کو بائیکیا “شراکت دار” یا پارٹنر کہا جاتا ہے۔

اس کے علاوہ آن لائن ڈلیوری سروس کے دیگر الیکٹرانک کمپنیوں کے ساتھ تجارتی تعلقات کی وجہ سے صارفین کے کے الیکٹرک، ایزی پیسہ اور جاز کیش کی معلومات بھی بائیکیا کے سرور پر محفوظ تھیں جو کہ لیک ہونے والے ڈیٹا میں شامل ہیں۔

واضح رہے کہ بائیکیا ایک پاکستانی آن لائن ڈلیوری سروس ہے جو شہریوں کو ان کا سامان ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل کرنے کی سہولت مہیا کرتی ہے۔

دوسری جانب کمپنی نے موقف دینے سے انکار کردیا ہے۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

خواجہ آصف کوجیل میں سہولیات دینےسے متعلق درخواست پرتحریری فیصلہ جاری

خواجہ آصف کوجیل میں سہولیات دینےسے متعلق درخواست پرتحریری فیصلہ جاری

سونے کی قیمت میں پانچ سو روپے فی تولہ کمی 

سونے کی قیمت میں پانچ سو روپے فی تولہ کمی