in

مریم نواز ہندوستان کی زبان بول رہی ہیں، شہبازگل

مریم نواز ہندوستان کی زبان بول رہی ہیں، شہبازگل

وزیراعظم کے معاون خصوصی شہبازگل کا کہنا ہے کہ مریم نواز بھارت کی زبان بول رہی ہیں کیوں کہ حکومت پاکستان کے بارے میں یہی تاثر ہندوستان بھی دینا چاہتا ہے جو مریم دے رہی ہیں۔
سماء کے پروگرام ایجنڈا 360 میں گفتگو کرتے ہوئے شہبازگل کا کہنا تھا کہ ہندوستان تو بڑے شوق سے کہے گا کہ پاکستان ہمیں کشمیر بیچنے کو تیار ہے تاکہ مقبوضہ کشمیر کے عوام کا جذبہ متزلزل ہوسکے۔
شہبازگل کا کہنا تھا کہ پاکستان کی کوئی بھی حکومت کبھی کشمیر پر کوئی سمجھوتہ نہیں کرسکتی چاہے وہ نوازشریف ہی کیوں نہ ہوں کیوں کہ پاکستانی عوام ایسے شخص کو چھوڑیں گے ہی نہیں۔
رہنما تحریک انصاف کا کہنا تھا کہ نوازشریف نے کشمیر کاز کو بہت نقصان پہنچایا ہے جس کے بدلے میں نریندر مودی ان کے گھر بھی آئے تھے۔
انہوں نے کہا کہ کشمیر کی خصوصی اسٹیٹیس کا حاتمہ ہماری نااہلی تب ہوتی جب ملک کے اندر کوئی اقدام ہوتا ہندوستان تو عرصے سے کشمیریوں پر مظالم کررہا ہے۔
شہبازگل کا کہنا تھا کہ ہندوستان کے اندر آرایس ایس کی سرکار مسلمانوں کو دبانے کی کوشش کررہی ہے۔
انہوں نے کہا کہ ہندوستان مقبوضہ کشمیر کو صوبہ بنانا چاہ رہا ہے جس کی کشمیری مزاحمت کررہے ہیں مگر مریم نواز کہہ رہی ہیں کہ پاکستان بھی یہی کام کررہا ہے اس سے دوسری طرف کے کشمیری پاکستان کے بارے میں کیا سوچتے ہوں گے۔
شہباز گل کا کہنا تھا کہ علی امین گنڈاپور کا سیاسی تجربہ اور بصیرت مریم نواز سے زیادہ ہے مریم نواز اور بلاول بھٹو گلگت بلتستان الیکشن میں یہی باتیں کرتے تھے اور پھر جیت تحریک انصاف کی ہوئی۔
انہوں نے کہا کہ الیکشن کے قریب وزیراعظم کا بھی آزاد کشمیر جانے کا ارادہ ہے لیکن ہماری طرف سے علی امین کافی ہیں۔
شہباز گل کا کہنا تھا کہ مریم نواز صرف اس وقت جھوٹ نہیں بولتیں جب وہ چپ رہتی ہیں، مسلم لیگ کی پچھلے پانچ سال کشمیر میں حکومت تھی یہ عوام کو بتائیں کہ 5 برسوں میں ان کی کیا کارگردگی رہی۔
پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے رہنما مسلم لیگ ن جاوید لطیف کا کہنا تھا کہ 70 سالوں میں بھارت کو کشمیر کا اسٹیٹس بدلنے کی ہمت نہیں ہوئی مگر اس دور حکومت میں انہوں نے کشمیر کا خصوصی اسٹیٹس حتم کردیا۔
جاوید لطیف کا کہنا تھا کہ وزیراعظم نے ڈونلڈ ٹرمپ کے پاس جا کر کہا کہ ہمیں ان کی ثالثی قبول ہے اور اس کے چند دنوں بعد بھارت نے وہ قدم اٹھا لیا۔
انہوں نے کہا کہ ہم نے 70 سال میں ایسی کوئی حکمت عملی کیوں نہیں بنائی کہ اگر بھارت نے یہ اقدام کیا تو ہماری حکمت عملی کیا ہوگی، نہ ہی اب دو سال سے اس حوالے سے کوئی کام ہورہا ہے۔
جاوید لطیف کا کہنا تھا کہ کشمیر کو صوبہ بنانے کی باتیں ہورہی ہیں اگر حکومت کا ایسا کوئی ارادہ نہیں تو کسی ذمہ دار شخص کو وہاں بھیج کر لوگوں کو تسلی دیں۔
انہوں نے کہا کہ وزیراعظم تو اس لائق نہیں کہ وہاں کے لوگ ان کی بات کا یقین کریں مگر کسی ادارے کے کسی قابل اعتبار شخص کو آزاد کشمیر کے عوام کی باتیں سننی چاہئیں۔
جاوید لطیف کا کہنا تھا کہ عمران خان نے پارلیمنٹ کے اندر کہا تھا کہ پرویز مشرف نے پاکستانیوں کو امریکا کے ہاتھوں بیچا تو پھر اس پر کوئی جے آئی ٹی کیوں نہیں بن رہی۔
انہوں نے کہا کہ مریم نواز کو کشمیر الیکشن مہم کی ذمہ داری پارٹی کی جانب سے دی گئی ہے جہاں شہبازشریف کی ضرورت ہوگی وہاں وہ ضرور جائیں گے۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

اداکارہ مہوش حیات نے نیا ڈانس چیلنج دے دیا

اداکارہ مہوش حیات نے نیا ڈانس چیلنج دے دیا

علی امین گنڈاپور کو آزاد کشمیر سے نکلنے کا حکم

علی امین گنڈاپور کو آزاد کشمیر سے نکلنے کا حکم