in

ٹرانسپیرنسی رپورٹ میں لیگی دور کے 4ماہ بھی ہیں،علی محمدخان

ٹرانسپیرنسی رپورٹ میں لیگی دور کے 4ماہ بھی ہیں،علی محمدخان

وفاقی وزیر برائے پارلیمانی امور علی محمد خان نے دعویٰ کیا ہے کہ ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کی کرپشن سے متعلق رپورٹ میں مسلم لیگ نواز کے دور حکومت کے 4 ماہ بھی شامل ہیں۔

سماء ٹی وی کے پروگرام سوال میں میزبان احتشام امیرالدین نے سوال پوچھا کہ ایک طرف حکومت کرپشن کے خلاف کارروائی کے دعوے کر رہی ہے۔ دوسری جانب کرپشن کی رینکنگ میں اضافہ ہوتا جارہا ہے۔

علی محمد خان نے درود شریف پڑھنے کے بعد کہا کہ اس رپورٹ میں ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کی رپورٹ میں ایک سال سے کچھ زیادہ عرصہ تحریک انصاف کی حکومت کا ہے۔ کچھ حصہ عبوری حکومت اور 4 ماہ شاہد خاقان عباسی کے دور وزارت عظمی کے ہیں۔ یہ سارا ڈیٹا ملاکر انہوں نے رپورٹ دی ہے۔

علی محمد خان نے کہا کہ اپوزیشن ٹرانسپرنسی انٹرنیشنل کا بار بار حوالہ دے رہی ہے۔ اسی رپورٹ میں نیب اور حکومت کی کارکردگی کی تعریف بھی کی گئی ہے۔ کیا اپوزیشن اس کو بھی تسلیم کرتی ہے جبکہ ماضی میں ٹرانسپیرنسی نے ان کے خلاف انتہائی منفی رپورٹس دی ہیں کیا وہ ان رپورٹس کو بھی درست تسلیم کرتے ہیں۔

علی محمد خان نے کہا کہ شہباز گل نے ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کی رپورٹ کا ’اچھی طرح‘ جواب دیا ہے۔ شہباز گل نے ٹوئٹر پر اپنے بیان میں دعویٰ کیا تھا کہ اس رپورٹ کے لیے استعمال ہونے والا ڈیٹا گذشتہ حکومتوں کے ادوار یعنی 2017، 2018 اور 2019 میں شائع ہوا اور اس سے بھی پہلے جمع کیا گیا۔

ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کا مؤقف

دوسری جانب ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل نے شہباز گِل کا دعویٰ غلط قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ رپورٹ کی تیاری میں جس دور کا ڈیٹا استعمال کیا ہے، اس دور میں پاکستان تحریک انصاف کی حکومت تھی۔

جب شہباز گل نے رپورٹ پر تبصرہ کیا تو برطانوی نشریاتی ادارے ( بی بی سی) نے اس معاملے کی وضاٹ کیلئے ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کو ای میل لکھ کر وضاحت چاہی۔ بی بی سی کو دیے گئے جواب میں ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کے بین الاقوامی دفتر نے بتایا کہ 2020 کی رپورٹ کی تیاری میں 13 اداروں کا ڈیٹا استعمال کیا گیا ہے اور یہ ڈیٹا 2018 سے لے کر 2020 تک کے دورانیہ کا احاطہ کرتا ہے۔ رپورٹ کے ساتھ منسلک اضافی  فائلز کے مطابق 13 میں سے آٹھ اداروں کا ڈیٹا پاکستان میں بدعنوانی کے تاثر کو مرتب کرنے کے لیے استعمال کیا گیا ہے۔

ادارے کے مطابق 2018 کا ڈیٹا صرف افریقی ترقیاتی بینک کے کنٹری پالیسی اینڈ انسٹیٹیوشنل اسسمنٹ کا ہے۔ ادارے کی جاری کردہ دستاویز کے مطابق یہ ادارہ برِاعظم افریقہ کے ممالک کا تجزیہ کرتا ہے اور استعمال کیا گیا باقی تمام ڈیٹا 2019 اور 2020 کا ہے۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Uzair ATC KHI

مشہور زمانہ گینگسٹر عزیر بلوچ مزید 2 مقدمات میں بری

وال اسٹریٹ پر کیا چل رہا ہے؟

وال اسٹریٹ پر کیا چل رہا ہے؟