in

احسن اقبال کا چیئرمین نیب کو چیلنج

احسن اقبال کا چیئرمین نیب کو چیلنج

پاکستان مسلم لیگ ن کے رہنما احسن اقبال کا کہنا ہے کہ چیئرمین نیب کہتے ہیں کہ ہم فیس نہیں کیس دیکھتے ہیں تو اگر ان میں ہمت ہے تو کرتار پور کیس دیکھیں۔
سماء کے پروگرام ندیم ملک لائیو میں گفتگو کرتے ہوئے احسن اقبال کا کہا تھا کہ چیئرمین نیب نے میرے خلاف ایک بوگس خبر پر نوٹس لے کر خبر بنائی لیکن ان میں ہمت نہیں ہے کہ کرتارپور کوریڈور کی تعمیر کا کیس دیکھیں۔
احسن اقبال کا کہنا ہے کہ اسلام آباد ہائیکورٹ نے میری ضمانت کیس کے فیصلے میں لکھا کہ نیب بغیر ثبوت صرف الزام پر کسی کے بنیادی حقوق سلب نہیں کرسکتا۔
انہوں نے کہا کہ یہ کہنا کہ اسپورٹس کمپلیکس نارووال میں کیوں بنایا گیا نارووال کے عوام کے ساتھ زیادتی ہے۔
رہنما ن لیگ کا کہنا تھا کہ اگر کہیں قانون کی خلاف ورزی ہوئی ہے تو اس پر قانون کے مطابق کارروائی ہونی چاہیے لیکن سیاسی نوعیت کے کسیز سے اصل کیسز بھی متنازع ہوگئے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ 72 سال میں کبھی بھارت کو کشمیر کا اسٹیٹس بدلنے کی ہمت نہیں ہوئی مگر حکومت کی خاموشی سے ایسا لگتا ہے کہ یہ کام افہام و تفہیم سے ہوا ہے۔
پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے رہنما پیپلزپارٹی سلیم مانڈوی والا کا کہنا تھا کہ بینک میں کھولا گیا کوئی بھی اکاؤنٹ فیک نہیں ہوسکتا لیکن اگر کسی اکاؤنٹ کا غلط استعمال ہوا ہے تو بینک بھی جرم میں شریک ہے۔
سلیم مانڈوی والا کا کہنا تھا کہ اپوزیشن نے کبھی نہیں کہا کہ نیب قانون میں ترمیم نہ کی جائے لیکن اگر اپوزیشن نے زیادہ شقوں میں ترمیم کی بات کی تھی تو اس پر بات ہونی چاہیے تھی۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ حکومت نے اپوزیشن کی تجاویز پر غور کرنے کے بجائے انہیں این آراو کے حصول کی کوشش کا نام دے دیا۔
شیخ رشید احمد کے بلاول بھٹو سے متعلق بیان پر تبصرہ کرتے ہوئے سلیم مانڈوی والا کا کہنا تھا کہ جب آپ کے پاس جواب نہیں ہوتا تو آپ اس قسم کے باتیں کرتے ہیں۔
پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے رہنما تحریک انصاف ہمایوں اختر کا کہنا تھا کہ احتساب کے نام پر سیاسی انتقام کی روایت ایوب خان اور ذوالفقار علی بھٹو کے ادوار میں شروع ہوئی تھی اور نوازشریف دور میں سیف الرحمان کمیشن میں بھی پی پی رہنماؤں کے ساتھ کیا ہوا وہ سب کے سامنے ہے۔
ہمایوں اختر کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف کا واضح موقف ہے کہ نیب قوانین میں ترمیم کی ضرورت ہے تاکہ نیب سے بیوروکریسی اور نجی کاروبار کو تحفظ مل سکے۔
انہوں نے کہا کہ جب ہم نے نیب قانون میں تبدیلی کی کوشش کی اپوزیشن نے مطالبات کی ایک لمبی فہرست تھما کر اپنے قائدین کو بچانے کی کوشش کی۔
ہمایوں اختر کا کہنا تھا کہ احتساب کا ادرہ ہر مہذب ملک میں ہوتا ہے اور پاکستان میں بھی ہونا چاہیے لیکن قانون کو بہترکرنے کی ضرورت ہے۔
رہنما تحریک انصاف کا کہنا تھا کہ حکومت پر تنقید کرنے والی اپوزیشن جماعتیں چار چار بار حکومت میں آچکی ہیں لیکن مسئلہ کشمیر کے حل کے لیے انہوں نے کچھ بھی نہیں کیا۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

ویڈیو:نخريلے5 من کھجوریں کھانے والے بکروں کی دھوم

ویڈیو:نخريلے5 من کھجوریں کھانے والے بکروں کی دھوم

ملالہ سے منسوب اسکول کا نام دوبارہ تبدیل کرنیکا فیصلہ

ملالہ سے منسوب اسکول کا نام دوبارہ تبدیل کرنیکا فیصلہ