in

بحریہ ٹاؤن حملہ کیس: قوم پرست رہنماء خودعدالت میں پیش

بحریہ ٹاؤن حملہ کیس: قوم پرست رہنماء خودعدالت میں پیش

بحریہ ٹاؤن کراچی حملہ کیس میں قوم پرست رہنماء زین شاہ خود انسداد دہشت گردی عدالت میں پیش ہوگئے۔

کراچی سپر ہائی وے پر واقع بحریہ ٹاؤن پر قوم پرست جماعتوں کے سیکڑوں افراد نے اس وقت حملہ کردیا تھا جب 6 جون کو ہزاروں افراد وہاں احتجاج کیلئے جمع تھے، مشتعل افراد نے بحریہ ٹاؤن کا مرکزی دروازہ، کئی عمارتیں اور گاڑیاں نذر آتش کردی تھیں جبکہ بینک سمیت دیگر عمارتوں میں توڑ پھوڑ بھی کی تھی۔

انسداد دہشت گردی کی عدالت نے قوم پرست رہنماء زین شاہ کو 26 جون تک ریمانڈ پر جیل بھجوادیا۔

سندھ یونائیٹڈ پارٹی کے سربراہ جلال محمود شاہ، زین شاہ، سجاد احمد چانڈیو، اسلم خیرپوری اور جان محمد جونیجو نے بحریہ ٹاؤن کیس میں ضمانت کیلئے سندھ ہائیکورٹ سے رجوع کیا تھا، انہیں 10 جون کو 25 ہزار روپے کے مچلکوں کے عوض 10 روز کیلئے حفاظتی ضمانت دی گئی تھی۔

قوم پرست جماعتوں پر مشتمل سندھ ایکشن کمیٹی نے بحریہ ٹاؤن کی جانب سے مبینہ طور پر گوٹھوں کی زمینیں زبردستی ہتھیانے پر احتجاج کی کال دی تھی۔

سندھ ایکشن کمیٹی ڈاکٹر قادر مگسی، جلال محمود شاہ، ایاز لطیف پلیجو اور دیگر سندھی قوم پرست رہنماؤں پر مشتمل ہے۔ سندھ انڈیجینیئس رائٹس الائنس نے بھی احتجاج کی حمایت کی تھی۔

مظاہرین کا دعویٰ ہے کہ بحریہ ٹاؤن حکام قریبی گوٹھوں میں جاکر وہاں کے رہائشیوں کو جگہ خالی کرنے کا کہتے ہیں، وہ لوگوں کو رقم دینے کی پیشکشیں کرتے ہیں تاہم گوٹھ کے رہائشی اپنی آبائی زمینیں چھوڑنے سے انکار کرچکے ہیں۔

الائنس کے ارکان کا کہنا ہے بحریہ ٹاؤن انتظامیہ نور محمد گبول گوٹھ، عثمان اللہ رکھیو گوٹھ، ہادی بخش گبول گوٹھ اور عبداللہ گبول گوٹھ کی زمینوں پر قبضہ کرنا چاہتے ہیں، گوٹھ کی ان زمینوں کے علاوہ وہ کمال جوکھیو، فائز گبول اور امیر الدین گبول کی نجی زمینیں بھی ہتھیانا چاہتے ہیں۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

شاہ محمود قریشی کی ایرانی ہم منصب جواد ظریف سے ملاقات

شاہ محمود قریشی کی ایرانی ہم منصب جواد ظریف سے ملاقات

قائد اعظم یونیورسٹی کے طالب علم کے ساتھ اسلامی یونیورسٹی میں اجتماعی زیادتی

قائد اعظم یونیورسٹی کے طالب علم کے ساتھ اسلامی یونیورسٹی میں اجتماعی زیادتی