in

شریعت اورقرآن میں سورج گرہن کےدوران کام نہ کرنےکا تذکرہ نہیں،مفتی زبیر

شریعت اورقرآن میں سورج گرہن کےدوران کام نہ کرنےکا تذکرہ نہیں،مفتی زبیر

چاند کےسورج اور زمین کے بیچ آنے کی وجہ سے سورج گرہن ہوتا ہے

مفتی زبیر نے کہا ہے کہ شریعت اور قرآن میں سورج گرہن کے دوران گھر کے کام نہ کرنے اور حاملہ عورتوں کو اندر رہنے سے متعلق کوئی تذکرہ نہیں ہے۔

سماء کے پروگرام نیا دن میں بات کرتے ہوئے ماہر فلکیات جاوید اقبال نے بتایا کہ سورج گرہن عام طور پر سال میں دو بار ہوتے ہیں۔ چاند کے سورج اور زمین کے بیچ آنے کی وجہ سے سورج گرہن ہوتا ہے۔اس دوران دن کے وقت سورج کی شعائیں زمین تک نہیں پہنچتی ہیں۔مکمل سورج گرہن کے دوران کچھ ستارے دکھائی دیتے ہیں اور اس حوالے سے کچھ تجربات بھی کیے جاتے ہیں۔

مذہبی اسکالر مفتی زبیر نے بتایا کہ سورج اورچاند کا گرہن ہونا اللہ کی نشانیوں کے معاملات ہیں۔ اس دوران اللہ کا ذکر کرنا چاہئے۔مفتی زبیر کا کہنا تھا کہ سورج گرہن کے دوران حاملہ عورت کو کام کرنے سے روکنا شریعت اور قرآن مجید میں نہیں ہے۔ نہ  کسی حدیث میں ایسی کوئی بات آئی ہے تاہم طبی معاملے میں ایسا ہوسکتا ہے۔

پاکستانی وقت کےمطابق سورج گرہن دوپہر 1 بج کر 12 منٹ پر شروع ہوا ہے اور دوپہر 3  بج کر 42منٹ پر سورج گرہن اپنے عروج پر ہوگا۔سورج گرہن کا اختتام شام 4 بج کر 34 منٹ پر ہوگا۔اس کا مکمل دورانیہ پاکستان میں 3 گھنٹے 22 منٹ ہوگا۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

بٹ گرام : جیپ کھائی میں گرنےسے2افراد جاں بحق،7زخمی

بٹ گرام : جیپ کھائی میں گرنےسے2افراد جاں بحق،7زخمی

بھارتی اداکارہ صوفیہ حیات اداکار سلمان خان پر برس پڑیں کھری کھری سنادیں

بھارتی اداکارہ صوفیہ حیات اداکار سلمان خان پر برس پڑیں کھری کھری سنادیں