in

گلگت بلتستان:عوام میں سیاحتی مقامات تک راستےبنانےکابڑھتارجحان

گلگت بلتستان:عوام میں سیاحتی مقامات تک راستےبنانےکابڑھتارجحان

گلگت بلتستان میں عوام میں اپنی مدد آپ کے تحت دلکش مقامات تک راستوں کی تعمیر اور وہاں تک سیاحوں کی رسائی سہل ترین بنانے کا رجحان بڑھ رہا ہے۔
نگر سکندر آباد کے عوام نے بھی اپنی مدد آپ کے تحت 21 دن میں شیلٹر میڈوز تک ٹریک بنایا ہے تاکہ علاقے میں سیاحت کو فروغ مل سکے۔
ڈپٹی کمشنر نگر شاہ رخ چیما نے بھی علاقہ مکینوں کی محنت کو دیکھ کر حکومت کی طرف سے مزید اقدامات کا اعلان کیا ہے تاکہ اس ٹریک کو سیاحوں کے لیے مزید آسان اور دلکش بنایا جاسکے۔
پونی ٹریک کے نام سے منسوب اس ٹریک کی اونچائی پر سیاح راکا پوشی سمیت ہنزہ نگر کے ارد گرد کے خوبصورت نظاروں سے بھی محظوظ ہوسکتے ہیں۔
یہ آسان اور انتہائی خوبصورت ٹریک ہے جس کے ذریعے سیاح اب سکندرآباد سے اوپر جنگل تک باآسانی راستہ طے کرسکتے ہیں جبکہ علاقہ مکین اپنے پالتو جانوروں کو بھی چرانے کے لیے اوپر چراہ گاہوں تک لے جاسکیں گے۔


نگر سکندر آباد کے سماجی کارکن امجد حسین نے سماء ڈیجیٹل کو بتایا کہ اس ٹریک کو بنانے میں سکندرآباد کے عمائدین نے دن رات بہت محنت کی ہے۔
امجد حسین کا کہنا تھا کہ یہ 1200 فٹ طویل ٹریک علاقہ مکینوں نے 21 دن کے محنت سے بنایا جو مختلف گروپس میں کام کرتے تھے۔
انہوں نے کہا کہ اس سے پہلے سیاحوں کا شیلٹر میڈوز کے ٹاپ تک پہنچنا ممکن نہیں تھا لیکن اب وہ باآسانی ڈھائی گھنٹے پیدل ٹریک کے بعد وہاں پہنچ سکتے ہیں
امجد حسین کا کہنا تھا کہ ٹریک کے تعمیر کے دوران ایک افسوس ناک واقعے میں ایک شخص کی جان بھی چلی گئی مگر علاقہ مکینوں نے کام جاری رکھا اور اپنے انجام کو پہنچایا۔
علاقہ مکنیوں نے حکومت سے بھی علاقے میں ترقیاتی کاموں خصوصاً سیاحوں کی سہولت کے لیے اقدامات کا مطالبہ کیا ہے تاکہ اس علاقے کو بیرونی سیاحوں کے لیے زیادہ سے زیادہ پرکشش بنایا جاسکے۔
اس سے پہلے گلگت بلتستان کی وادی ہنزہ کے گاؤں گلمت میں بھی عوام نے اپنی مدد آپ کے تحت اوندرا نامی پہاڑی تراش کر 1500 سے زائد سیڑھیاں تعمیر کی تھیں۔
علاقے کے مرد اور خواتین نے ان سیڑھیوں کی تعمیر میں رضاکارانہ کام کیا اور اسے مکمل کرنے میں 20 دن لگے تھے۔ یہ سیڑھیاں اوندرا پہاڑی کے اوپر 3 ہزار فٹ بلندی پر واقع ایک قدیم قلعے کی باقیات تک رسائی کے لیے بنائی گئی ہیں۔
سیڑھیاں چڑھ کر آس پاس کی خوبصورت وادی کا نظارہ کیا جا سکتا ہے اور علاقہ مکینوں کو امید ہے کہ یہ جگہ سیاحت کے لیے موزوں ثابت ہو سکتی ہے۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

کینیڈاواقعہ انفرادی فعل نہیں،اسلاموفوبیا کابڑھتا رحجان ہے،وزیرخارجہ

کینیڈاواقعہ انفرادی فعل نہیں،اسلاموفوبیا کابڑھتا رحجان ہے،وزیرخارجہ

گاندھی کی پڑپوتی کو جعلسازی کے الزام میں 7سال قید

گاندھی کی پڑپوتی کو جعلسازی کے الزام میں 7سال قید