in

بحریہ آئیکون ٹاور کراچی پر حملہ کے پیچھے کون؟

بحریہ آئیکون ٹاور کراچی پر حملہ کے پیچھے کون؟

کراچی کے علاقے کلفٹن میں 2 جون بروز بدھ کو بحریہ آئیکون ٹاور پر دستی بم حملے میں سیکیورٹی گارڈ زخمی ہوگیا، جو اس کثیر المنزلہ عمارت کی دیکھ بھال پر مامور تھا۔

تاحال کسی دہشت گرد تنظیم یا گروپ کی جانب سے دھماکے کی ذمہ داری قبول نہیں کی گئی ہے، تاہم کراچی پولیس کے اعلیٰ افسر عمر شاہد خطاب نے اس دستی بم حملے کے پیچھے کالعدم سندھودیش ریولوشنری آرمی کے ملوث ہونے کا امکان ظاہر کیا ہے۔

ڈپٹی انسپکٹر جنرل حامد کے مطابق کالعدم ایس آر اے پر شک کی کئی وجوہات ہیں، جس میں سے ایک یہ بھی ہوسکتی ہے کہ یہ حملہ گڈاپ اور کاٹھور رہائشیوں سے یکجہتی کا اظہار ہو۔

گڈاپ اور کاٹھور رہائشیوں کی جانب سے اس سے قبل بحریہ ٹاؤن کراچی کے خلاف متعدد مظاہرے بھی کیے گئے ہیں، جس میں ان لوگوں کا کہنا تھا کہ بحریہ ٹاؤن انتظامیہ نے غیر قانونی طریقے سے ان کی آبائی زمینوں پر قبضہ کیا۔

بم ڈسپوزل اسکواڈ کی جانب سے بھی بحریہ آئیکون ٹاور کے اس حصے کا معائنہ کیا گیا، جہاں دستی بم پھینکا گیا تھا۔ بی ڈی ایس کا یہ ماننا ہے کہ اس حملے میں امریکی ساختہ آر جی ڈی 5 کا استعمال کیا گیا ہے۔

بی ڈی ایس کے مطابق یہ وہی بم ہے جیسے پچھلی تخریب کاری کی کارروائیوں میں استعمال کیا گیا اور سندھ بھر میں رینجرز پر حملے کیے گئے اور ان حملوں کی ذمہ داری کالعدم ایس آر اے نے قبول کی تھی۔

ڈی آئی جی حامد کے مطابق قانون نافذ کرنے والے اداروں کے خلاف برسرپیکار سندھ سے تعلق رکھنے والا اس علیحدگی پسند گروپ کا نظریہ ہے کہ مسلح افواج صوبے بھر میں سندھیوں کی نسل کشی اور علیحدگی پسندوں کے خلاف آپریشن میں ملوث ہے۔

کالعدم تنظیم کا یہ سمجھتی ہے کہ مسلح افواج دراصل پنجابی اسٹبلشمنٹ ہے جو سندھ کے ذرائع جیسے دریائے سندھ، بحیرہ عرب، ساحلی پٹیاں اور اس ملک کے معاشی گڑھ کراچی کو اپنے زیر اثر لے چکی ہیں۔ اس تنظیم کا یہ بھی خیال ہے کہ پنجاب نے اپنے معاشی اور غیر معاشی ترقی کیلئے سندھ کے وسائل کو بلا دریغ استعمال کیا ہے۔

ماضی میں بحریہ ٹاؤن کراچی کے خلاف مظاہرہ اور احتجاج میں حصہ لینے والے گل حسن کلمتی کا کہنا ہے کہ انہوں نے آج تک اپنے مظاہروں اور احتجاج کیلئے کسی کالعدم تنظیم سے مدد طلب نہیں کی اور وہ بحریہ آئیکون ٹاؤر پر ہونے والے دستی بم حملے کی مذمت کرتے ہیں۔

سماء ڈیجیٹل سے گفتگو میں ان کا کہنا تھا کہ وہ لوگ جو اپنے حقوق کیلئے آواز بلند کر رہے ہیں ان کا ایسے حملوں سے کوئی لینا دینا نہیں اور نہ ہی ایسے گروپس سے مظاہرہ اور احتجاج کرنے والوں کا کوئی تعلق ہے۔



Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

رنگے ہاتھوں پکڑے جانے پر بیوی نے آشنا کے ساتھ مل کر شوہر کو قتل کردیا  لاش کہاں چھپائی؟ انتہائی افسوسناک کہانی

رنگے ہاتھوں پکڑے جانے پر بیوی نے آشنا کے ساتھ مل کر شوہر کو قتل کردیا  لاش کہاں چھپائی؟ انتہائی افسوسناک کہانی

بیوی کو کھانسی ہوئی تو شوہر نے تیزاب پلا دیا

بیوی کو کھانسی ہوئی تو شوہر نے تیزاب پلا دیا